latest news

پاکستان میں ایک ہفتے کے دوران پیش آنے والے 6 افسوسناک واقعات

پاکستان ایک ہفتے کے دوران ہونے والے گھناؤنے واقعات کے نتیجے میں ٹوئٹر پر ٹرینڈ کر رہا ہے۔ پاکستان کے بڑے شہروں سے شروع ہونے والے جرائم کے واقعات نے ایک بار پھر دنیا کے سامنے ملک کی ساکھ کو داغدار کر دیا ہے۔

ٹویٹر کے رجحانات کا یہ سلسلہ سیالکوٹ کے لنچنگ کے واقعے کے بعد سامنے آنا شروع ہوا جہاں ایک سری لنکن شہری کو فیکٹری ورکرز کے ہاتھوں خوفناک طریقے سے قتل کر دیا گیا۔ حال ہی میں، سوشل میڈیا کے ٹرینڈز نے ایک اور سانحہ کو اجاگر کیا ہے جو بلوچستان کے دارالحکومت میں پیش آیا اور سیالکوٹ کے واقعے کے فوراً بعد اس نے توجہ حاصل کرنا شروع کر دی۔ بدقسمتی سے کوئٹہ کا مقدمہ 2 دسمبر 2021 کو درج ہوا لیکن مرکزی دھارے کا میڈیا اس پر خاموش رہا۔ مقامی پولیس کے ساتھ ساتھ سماجی کارکن حمیدہ کی طرف سے پریس کانفرنسیں کی گئیں، لیکن یہ توجہ مبذول کرانے میں ناکام رہی۔ کوئٹہ کے سوشل میڈیا پر ٹرینڈ ہونے کے بعد اس واقعے نے تشویش کا اظہار کرنا شروع کر دیا، خاص طور پر 10 دسمبر کو جس کے بعد عوام کو صورتحال کی سنگینی کا احساس ہونا شروع ہوا۔

فیصل آباد کا واقعہ جہاں ایک الیکٹرک سٹور کے سامنے 4 خواتین کو برہنہ کر دیا گیا وہ بھی پاکستان کے وقار پر سیاہ دھبہ تھا۔ اگرچہ بعد میں سی سی ٹی وی فوٹیجز کے ذریعے یہ بات سامنے آئی کہ خواتین نے خود ہی اپنے کپڑے پھاڑ دیے تھے اور بعد میں اپنی شرمناک حرکتوں کا اعتراف کر لیا تھا۔ پھر بھی یہ دیکھا گیا کہ وہاں موجود لوگوں کے درمیان کوئی بھی نہیں تھا جو کارروائی کو روکنے کی کوشش کر سکے کیونکہ اس کے فوراً بعد بہت سی ویڈیوز میڈیا پر سامنے آئیں۔ بدقسمتی سے فیصل آباد کے مکینوں کا کہنا ہے کہ شہر میں ایسے واقعات معمول بنتے جا رہے ہیں۔

عفیفہ راؤ نے مزید روشنی ڈالی کہ ان مرکزی دھارے کے واقعات میں کئی دوسرے بھی رپورٹ ہوئے ہیں۔ ایسا ہی ایک واقعہ کراچی میں پیش آیا جہاں ارسلان مسعود نامی ایک معصوم طالب علم کو پولیس نے جعلی مقابلے میں ہلاک کر دیا۔ اس کیس میں نقیب اللہ مسعود کے ساتھ نمایاں مماثلت ہے، جہاں پولیس نے ان کے قتل کو یہ کہہ کر جواز فراہم کرنے کی کوشش کی کہ وہ ایک دہشت گرد گروہ سے وابستہ تھا لیکن یہ مقدمہ آج تک حل نہیں ہوا۔

ایک اور واقعہ منگل بازار سرگودھا میں پیش آیا، جہاں ایک سٹال لگانے والی ایک خاتون کو مردوں کے ایک گروہ کا سامنا کرنا پڑا جنہوں نے بھتہ طلب کیا جسے وہ ادا نہیں کر سکی۔ اس کے انکار پر مردوں نے غریب خاتون کو پٹرول چھڑک کر آگ لگا دی۔ متاثرہ شخص اب تشویشناک حالت میں جناح ہسپتال لاہور میں زیر علاج ہے۔

ان واقعات کے علاوہ ایک اور واقعہ میڈیا پر سامنے آیا۔ اس واقعے کی متعدد ویڈیوز میڈیا پلیٹ فارمز پر شیئر کی گئیں، جن میں بہاولپور کے قریب واقع شہر حاصل پور میں نیشنل کالج فیسٹیول کے دوران طالبات ڈانس کر رہی تھیں۔ غیر اخلاقی ویڈیوز میں طالبات کو اسٹیج پر رقص کرتے ہوئے دکھایا گیا تھا اور سامعین رقاصوں پر پیسے پھینکتے تھے۔ منتظمین نے بار بار یہ دعویٰ کیا کہ مرد طلباء نے خواتین کے لباس پہنے اور رقص کا مظاہرہ کیا جبکہ تمام اساتذہ اس تقریب سے لطف اندوز ہو رہے تھے اور کسی نے اسے غلط نہیں سمجھا۔ یہ واقعہ جامعہ بارانی کے واقعے سے ملتا جلتا تھا جو اس سال نومبر کے آخر میں پیش آیا تھا اور پنجاب اسمبلی میں خاصی ہنگامہ آرائی ہوئی تھی۔ تاہم ایسے واقعات کا اعادہ حکام کی غفلت کے باعث ہوتا ہے۔

اپنی ویڈیو میں، عفیفہ راؤ کو کوئٹہ ویڈیو اسکینڈل میں پیش آنے والے واقعات پر زور دیتے ہوئے دیکھا گیا ہے جہاں ہدایت اللہ خلجی نامی شخص کے لیپ ٹاپ سے خواتین کو غیر اخلاقی حرکات کرنے والی کئی ویڈیوز محفوظ کی گئی تھیں۔ یہ ایک خاتون کی طرف سے رپورٹ کی گئی جس نے 2 دسمبر کو پولیس سے رابطہ کیا اور دعویٰ کیا کہ اس کی دو بیٹیاں جنہیں دو سال قبل اغوا کیا گیا تھا، ابھی تک لاپتہ ہیں۔ وہ پہلے بھی پولیس کے پاس جا چکی تھی لیکن اس کا کوئی فائدہ نہیں ہوا، اس لیے وہ اپنی گمشدہ بیٹیوں کی ویڈیوز لے کر آیا جس میں دعویٰ کیا گیا کہ ہدایت اللہ خلجی نے انہیں اغوا کیا، شرمناک ویڈیوز بنائیں اور انہیں بلیک میل کرنے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کیں۔ اس کے بعد پولیس نے ہدایت اللہ کو اس کے بھائی خلیل اللہ خلجی سمیت گرفتار کر لیا اور تاحال ان کے ساتھی شانی خلجی کی تلاش جاری ہے۔ پولیس کا موقف ہے کہ اغوا ہونے والی لڑکیاں افغانستان کے شہر کابل میں واقع ہیں۔

اس طرح اغوا، جنسی زیادتی اور ویڈیوز بنانے جیسے جرائم کے علاوہ، یہ کیس انسانی اسمگلنگ یا اسمگلنگ کو بھی پیش کرتا ہے جس کے تحت لڑکیوں کو جسم فروشی پر مجبور کیا جاتا ہے اور سرحد پار منتقل کیا جاتا ہے۔ گھناؤنے کاموں کا یہ سلسلہ نوکری کی جعلی تجویز سے شروع ہوتا ہے جس کے نتیجے میں نوجوان خواتین کو پکڑ لیا جاتا ہے۔ پولیس نے 200 لڑکیوں کی ویڈیوز کی بازیافت کی اطلاع دی ہے اور یہ تعداد یقینی طور پر 500 لڑکیوں سے زیادہ ہے۔

عفیفہ راؤ کا کہنا ہے کہ یہ انتہائی بدقسمتی کی بات ہے کہ یہ بدنام زمانہ گرفتار ہونے پر کوئی خوف نہیں دکھاتے۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ ہدایت اللہ خلجی کے دادا حبیب اللہ خلجی ایک بدنام زمانہ منشیات فروش اور سمگلر تھے۔ حمیدہ ہزارہ نے پریس کانفرنسیں کیں لیکن جب انہوں نے وزیر اعلیٰ اور دیگر اہم شخصیات سے ملاقات کی کوشش کی تو انہیں صاف ٹھکرا دیا گیا۔ سوشل میڈیا پر اس مسئلے کو اجاگر کرنے والوں نے…

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *